Thursday, 30 May 2013

Tujhko Bhooley Hein Tou Kuch Dosh Zamane Ka Na Tha

Dosh Zamane Ka

    تجھ کو بُھولے ہیں تو کچھ دوش زمانے کا نہ تھا
    اب کے لگتا ہے کہ یہ دکھ ہی ٹھکانے کا نہ تھا

    یہ جو مقتل سے بچا لائے سروں کو اپنے
    ان میں اک شخص بھی کیا میرے گھرانے کا نہ تھا

    ہر برس تازہ کِیا عہدِ محبت کو عبث
    اب کُھلا ہے کہ یہ تہوار منانے کا نہ تھا

    اب کے بے فصل بھی صحرا گل و گلزار سا ہے
    ورنہ یہ ہجر کا موسم ترے آنے کا نہ تھا

    دوش پر بارِ زمانہ بھی لئے پھرتے ہیں
    مسئلہ صرف ترے ناز اٹھانے کا نہ تھا

    یار! کیا کیا تری باتوں نے رُلایا ہے ہمیں
    یہ تماشا سرِ محفل تو دِکھانے کا نہ تھا

    کوئی کس منہ سے کرے تجھ سے شکایت جاناں
    جس کو تُو بھول گیا یاد ہی آنے کا نہ تھا

    آئے دن اک نئی آفت چلی آتی ہے فرازؔ
    اب پشیماں ہیں کہ یہ شہر بسانے کا نہ تھا

Tujhko Bhoolay Hein Tou Kuch Dosh Zmane Ka Na Tha
Ab K Lagta Hai K Yeh Dukh He Thikane Ka Na Tha

Yeh Jo Maqtal Se Bacha Laey Hein Saron Ko Apne
Un Mein Ik Shakhs Bhi Kia Mere Gharane Ka Na Tha

Har Baras Taza Kia Ehd-e-Mohabbat Ko Abus
Ab Khula Hai K Yeh Tehwaar Manane Ka Na Tha

Ab K Be-Fasl Bhi Sehra, Gul-o-Gulzaar Sa Hai
Warna Yeh Hijr Ka Mosam Tere Aanay Ka Na Tha

Dosh Par Baar-e-Zamana Bhi Liyeh Phirte Hein
Mas’ala Sirf Tere Naaz Uthane Ka Na Tha

Yaar Kia Kia Teri Baton Ne Rulaya Hai Hame
Yeh Tamasha Sar-e-Mehfil Tou Dikhane Ka Na Tha

Koi Kis Mounh Se Kare Tujh Se Shikayat Janaa
Jis Ko Tu Bhool Gaya Yaad He Aany Ka Na Tha

Aaey Din Ik Aafat Chali Aati Hai Faraz
Ab Pashemaan Hein K Yeh Shehar Basane Ka Na Tha,,..




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Judai Hal Nahi Hai Mas'alon Ka........

Samjhte Kiun Nahi

جدائی حل نہیں ہے مسئلوں کا۔
سمجھتے کیوں نہیں ہو بات میری

Judai Hal Nahi Mas’alon Ka
Samjhte Kiun Nahi Ho Baat Meri




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Kia Kia Na Khuwaab Hijr K Mosam Mein Kho Gaey

Ab Khuwab Hogaie

کیا کیا نہ خواب ھِجر کے موسم میں کھو گئے
ھم جاگتے رھے تھے مگر بخت سو گئے

اُس نے پیام بھیجے تو رَستے میں رہ گئے
ھم نے جو خط لِکھے وہ ھوا بُرد ھو گئے

میں شہرِ گُل میں زخم کا چہرہ کِسے دکھاؤں
شبنم بدست لوگ تو کانٹے چَبھو گئے

آنچل میں پُھول لے کے کہاں جا رھی ھُوں میں
جو آنے والے لوگ تھے، وہ لوگ تو گئے

کیا جانیے، اُفق کے اُدھر کیا طلسم ھے
لَوٹے نہیں زمین پہ، اِک بار جو گئے

جیسے بدن سے قوسِ قزح پُھوٹنے لگی
بارش کے ھاتھ پُھول کے سب زخم دھو گئے

آنکھوں میں دِھیرے دِھیرے اُتر کے پُرانے غم
پلکوں میں ننھے ننھے ستارے پِرو گئے

وہ بچپنے کی نیند تو اب خواب ھو گئی
کیا عُمر تھی کہ رات ھُوئی اور سو گئے

کیا دُکھ تھے، کون جان سکے گا، نگارِ شب
جو میرے اور تیرے دوپٹے بِھگو گئے

Kia Kia Na Khuwab Hijr K Mosam Mein Kho Gaey
Hum Jagtey Rahe Thay, Magar Bakht So Gaey

Us Ne Payaam Bhaijey Tou Rastey Mein Reh Gaey
Hum Ne Jo Khat Likhey Woh Hawa Burd Ho Gaey

Mein Shehr-e-Gul Mein Zakhm Ka Chehra Kisay Dikhaon
Shabnam Badast Log Tou Kaantey Chubho Gaey

Aanchal Mein Phool Le K Kahan Ja Rahi Hoon Mein
Jo Aaney Walay Log Thay, Woh Log Tou Gaey

Kia Janiye Ufaq K Udhar  Kia Tilism Hai
Lotay Nahi Zameen Par Ik Baar Jo Gaey

Jese Badan Se Qoseh Qazah  Phootne Lagi
Barish K Hath Phool K Sab Zakhm Dho Gaey

Aankhon Mein Dheere Dheere Utar  K Purane Gham
Palkon Mein Nan’neh  Nan’neh Sitarey  Piro Gaey

Woh Bachpaney Ki Neend Tou Ab Khuwab Ho Gaie
Kia Umr Thi K Raat Hui Aur So Gaey

Kia Dukh Thay,  Kon Jan Sakay Ga , Nighar-e-Shab
Jo Mere Aur Tere Dupattay Bhigo Gaey,,,,,,,,,,...




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Rog Aisay Bhi Gham-e-Yaar Se Lag Jatey Hein

Diwaar Se Lag

روگ ایسے بھی غمِ یار سے لگ جاتے ہیں
در سے اُٹھتے ہیں تو دیوار سے لگ جاتے ہیں

عشق آغاز میں ہلکی سی خلش رکھتا ہے
بعد میں سینکڑوں آزار سے لگ جاتے ہیں

پہلے پہلے ہوس اک آدھ دکاں کھولتی ہے
پھر تو بازار کے بازار سے لگ جاتے ہیں

بے بسی بھی کبھی قربت کا سبب بنتی ہے
رو نہ پائیں تو گلے یار سے  لگ جاتے ہیں

کترنیں غم کی جو گلیوں میں اُڑی پھرتی ہیں
گھر میں لے آؤ تو انبار سے لگ جاتے ہیں

داغ دامن کے ہوں، دل کے ہوں کہ چہرے کے فرازؔ
کچھ نشاں عمر کی رفتار سے لگ جاتے ہیں

Rog Aisay Bhi Gham-e-Yaar Se Lag Jate Hein
Dar Se Uthte Hein Tou, Diwaar Se Lag Jate Hein

Ishq Aaghaz Mein Halki Si Khalish Rakhta Hai
Baad Mein Sainkron Aazaar Se Lag Jate Hein

Pehle Pehle Hawas Ik Aadh Dukaan Kholti Hai
Phir Tou Bazaar K Bazaar Se Lag Jate Hein

Be-Basi Bhi Kabhi Qurbat Ka Sabab Banti Hai
Ro Na Paen Tou Galay Yaar Se Lag Jate Hein

Katrane Gham Ki Jo Galyon Mein Urri Phirti Hein
Ghar Mein Lay Aao Tou Anbaar Se Lag Jate Hein

Daag Daman K Hon, Dil K Hon K Chehre K Faraz
Kuch Nishan Umr Ki Raftaar Se Lag Jate Hein....




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Monday, 27 May 2013

Ab K Ehsaan Jataney Bhi Nahi Aaya Koi

Aisa Rootha K

    اب کے احسان جتانے بھی نہیں آیا کوئی
    میں جو روٹھا تو منانے بھی نہیں آیا کوئی

    ایک وہ دور کہ سونے بھی نہ دیتے تھے مجھے
    ایک یہ وقت کہ جگانے بھی نہیں آیا کوئی

    ڈگمگاتا تھا تو سو ہاتھ لپکتے تھے مجھے
    گر گیا ہوں‌ تو اٹھانے بھی نہیں آیا کوئی

    جانے احباب پہ کیا گزری، خدا خیر کرے
    عرصے سے نیا زخم لگانے بھی نہیں آیا کوئی

    ایسے اُترا ہوں دلوں سے کہ ہنسانا تو کُجا
    ایک مدت سے رُلانے بھی نہیں آیا کوئی

    کیا سبھی عہد فقط سانس کے چلنے تک تھے؟
    قبر پہ دیپ جلا نے بھی نہیں آیا کوئی

    یوں تو سو بار جُڑا، ٹوٹا، مگر اب کے امین
    ایسے ٹوٹا کہ بنانے بھی نہیں آیا کوئی
Ab K Ehsaan Jataney Bhi Nahi Aaya Koi
Mein Jo Rootha Tou Mananey Bhi Nahi Aaya Koi

Ek Wo Dour K Soney Bhi Nahi Detey Thay Mujhe
Ek Ye Waqt K , Jaganey Bhi Nahi Aaya Koi

Dagmagata Tha Tou So Haath Lapaktey Thay
Gir Gaya Hoon Tou Uthaney Bhi Nahi Aaya Koi

Janey Ehbaab Pay Kya Guzri KHUDA Khair Karay
Arsay Se Naya Zakhm Laganey Bhi Nahi Aaya Koi

Aisay Utra Hoon Dilon Se K Hansana Tou Kuja
Aik Muddat Se Rulane Bhi Nahi Aaya Koi

Kia Sabhi Ehad Faqat Saans K Chalne Tak Thay
Qabr Par Deep Jalane Bhi Nahi Aaya Koi

Yun Tou So Baar Jurra Toota, Magar Ab K Mohsin
Aisa Toota K Bananey Bhi Nahi Aaya Koi...!!



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Kitab-e-Zeest K Har Baab K Unwaan Mein Tum Ho,,..........

Zindagi Ki Kitaab

کتابِ زیست کےہر باب کے عنوان میں تم ہو
ہے یہ تحریر سے ظاہر میرے وجدان میں تم ہو

اماوس ہے تیرا کاجل، جبیں ہے نور کا پرتو
چمن کی ہر کلی سے پھوٹتی مسکان میں تم ہو

کوئی اجڑا ہوا مندر، اٹی ہو گرد سے مورت
کچھ ایسے ہی میری جان اس دلِ ویران میں تم ہو

مجھے زندہ لیے پھرتا ہے یہ احساس کہ اب تک
تیری پہچان میں مَیں ہوں، میری پہچان میں تم ہو

میرے خوابو! اداسی ہے مری آنکھوں میں بعد ان کے
اگرچہ رت جگے مغوی ہیں، پر تاوان میں تم ہو

یہی کافی ہے بتلانا فقط اک دل ہے سینے میں
بہت ارمان ہیں دل میں، ہر اک ارمان میں تم ہو

تو کیا غم ہے جو حاوی ہو گیا ہے لشکرِ اعداء
تمہاری جیت ہے قیصرؔ ابھی میدان میں تم ہو


Kitab-e-Zeest K Har Baab K Unwaan Mein Tum Ho
Hai Yeh Tehree Se  Zahir Mere Wajdaan Mein Tum Ho

Amawas Hai Tera Kajal, Jabeen Hai Noor Ka Par Tu
Chaman Ki Har Kali Se Phoot’ti Muskaan Mein Tum Ho

Koi Ujrra Hua Mandir , Atti Ho Gard Se Moorat
Kuch Aise He Meri Jan Is Dil-e-Viran Mein Tum Ho

Mujhe Zinda Liyeh Phirta Hai Yeh Ehsas K Ab Tak
Teri Pehchan Mein, Mein Hoon, Meri Pehchan Mein Tum Ho

Mere Khuwabo Udasi Hai , Meri Ankhon Mein Bad Unk
Agr Chay Rat-Jagay Mugvi Hein, Par Tawaan Mein Tum Ho

Yehi Kafi Hai Batlana , faqat Ik Dil Hai Seenay Mein
Bohat Armaan Hein Dil Mein, Har Ik Arman Mein Tum Ho

Tu Kia Gham Hai, Jo Havi Hogaya Lashkar-e-Aada
Tumhari Jeet Hai Qaiser , Abhi Maidaan Mein Tum Ho..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Thursday, 16 May 2013

Phool Khushbu K Nashay He Main Bikhar Jatey Hein,,,,,

Log Pehchaan Banatey

پھول خوشبو کے نشے ہی میں بکھر جاتے ہیں
لوگ پہچان بناتے ہوئے مر جاتے ہیں

منزلیں اُن کا مُقدّر کہ طلب ہو جن کو
بے طلب لوگ تو منزل سے گُزر جاتے ہیں

جن کی آنکھوں میں ہوں آنسو، اُنہیں زندہ سمجھو
پانی مرتا ہے تو دریا بھی اُتر جاتے ہیں

لب خنداں ہوں، کہ ہوں اُن کی شگفتہ آنکھیں
ہم سمجھتے تھے کہ یہ زخم بھی بھر جاتے ہیں

   ہم ہیں سوکھے ہوئے تالاب پہ بیٹھے بیٹھے ہوئے ہنس
جو  تعلق  کو  نبھاتے  ہوئے  مر  جاتے  ہیں 

اے خدا  ایسی  اذیّت  سے بچانا  ہم  کو
جہاں دستار تو رہ جاتی ہے، سر جاتے ہیں


Phool Khusbu K Nashey He Mein Bikhar Jate Hein
Log Pehchaan Banatey Huey, Mar Jatey Hein

Manzilein Un Ka Muqaddar, K Talab Ho Jin Ko
Be-Talab Log Tou, Manzil Se Guzar Jate Hein

Jinki Aankhon Mein Hon Aansoo, Uneh Zinda Samjho
Pani Marta Hai Tou, Darya Bhi Utar Jatey Hein

Lab-E-Khandaan Hon K Unki Shagufta Aankhein
Hum Samjhte Thay K Yeh Zakhm Bhi Bhar Jatey Hein

Hum Hein Sookhay Huey Talaab Pe Bethe Huey Huns
Jo Ta’alluq Ko Nibhatey Huey Mar Jatey Hein

Ay Khuda Aisi Aziyat Se Bachana Hum Ko
Jahan Dastaar Tou Reh Jati Hai, Sar Jatey Hein,,,..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Bichaey Jaal , Kaheen Jama Aab-o-Dana Kia,,.....

Parindon Ko Be-thikana

بچھائے جال , کہیں جمع آب و دانہ  کیا
پھر اس نے سارے پرندوں کو بے ٹھکانہ کیا

میں تیرا حکم نہیں ٹالتا مگر مجھ میں
نہ جانے کون ہے جس نے تیرا کہا نہ کیا

بجز یقیں کوئی چارہ نہیں رہا میرے پاس
کہ پہلی بار تو اُس نے کوئی بہانہ کیا

ملے جو غم تو انہیں اپنے پاس ہی رکھا
خوشی ملی ہے تو تیری طرف روانہ کیا

میں مشتِ خاک ستاروں کا ہم نوا ٹھہرا
میں ایک پَل تھا اور اس نے مجھے زمانہ کیا



BicheY Jaal , Khaeen Jama Aab-o-Dana Kia
Phir Usne Sarey Parindon Ko Be-Thikana Kia

Mein Tera Hukm Nahi Taalta Magar Mujh Mein
Na Jane Kon Hai Jis Ne ,  Tera Kaha Na Kia

Ba-Juz Yaqeen Koi Chara Nahi Raha Mere Pass
K Pehli Baar Tou Us Ne Koi Bahana Kia

Milay Jo Gham Tou Ineh Apne Pass He Rakha
Khushi Mili Hai Tou , Teri Taraf Rawana Kia

Mein Musht-e-Khaak Sitaron Ka Hum-Nawa Thehra
Mein Aik Pal Tha , Aur Us Ne Mujhe Zamana Kia....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Hame Pachaarr K Kia Haisyat Tumhari Thi,,,........

 Kia Haisyat Tumhari

ہمیں پچھاڑ کے کیا حیثیت تمھاری تھی
وہ جنگ تم بھی نہ جیتے جو ہم نے ہاری تھی

اور اب تمھیں بھی ہر اک شخص اچھا لگتا ہے
گئے دنوں میں یہی کیفیت ہماری تھی

ہمارے چہرے دمِ صبح دیکھتے آ کر
کہ ہم نے رات نہیں زندگی گزاری تھی

بچھڑ گیا وہ جُدائی کے موڑ سے پہلے
کی اس کے بعد محبّت میں صرف خواری تھی



Hame Pachaar K Kia Haisyat Tumhari Thi
Woh Jung Tum Bhi Na Jeetay, Jo Hum Ne Hari Thi

Aur Ab Tumeh Bhi Har Shakhs Acha Lagta Hai
Gaey Dino Mein,  Yehi Kaifiyat Hamari Thi

Hamare Chehre Dam-e-Subha  Dekhtay Aakar
K Hum Ne Raat Nahi , Zindagi Guzari Thi

Bicharr Gaya Woh JUdai K Morr Se  Pehle
K Us K Baad Mohabbat Mein Sirf Khuwari Thi..



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It


Wednesday, 15 May 2013

Mein Uski Aahatein Chun Loon, Mein Usko Bol Kar Dekhon

Dareecha  Khol Kar

میں اس کی آہٹیں چُن لوں، میں اس کو بول کر دیکھوں
گلی میں کون پھرتا ہے دریچہ کھول کر دیکھوں

اور اب یہ سوچتا ہوں کیا تہِ داماں پڑے رہنا
کسی مشعل کی لو ٹھہروں، ہوا میں ڈول کر دیکھوں

یونہی شاید تسلّی ہو مری خستہ مزاجی کی
میں اپنی خاک ہی کوئے ہنر میں رول کر دیکھوں

یہ کیسی بید مجنوں کی تمنّا مجھ میں در آئی
کہ میں بھی خود میں پیدا یہ اَنا کا جھول کر دیکھوں

مرے بھی سر پہ رکھا ہے جنوں اسباب کی صورت
ملے فرصت تو اس گٹھڑی کو میں بھی کھول کر دیکھوں

نہ وہ آوارگی مجھ میں، نہ وہ آشفتگی مجھ میں
میں کس معیار پہ اپنی وفا کو تول کر دیکھوں


Mein Uski Aahatein Chun Loon , Mein Usko Bol Kar Dekhon
Gali Mein Kon Phirta Hai, Dareecha Khol Kar Dekhon

AUr Ab Yeh Sochta Hoon Kia Teh Damaan Parray Rehna
Kisi Mush’al Ki Loo Thehroon, Hawa Mein Dol Kar Dekhon

Yun He Shayad Tasalli Ho, Meri Khasta Mijazi Ki
Mein Apni Khaak He, Ko-e-Namal Mein Rol Kar Dekhon

Yeh Kesi Baid Majnu Ki Tamanna Mujh Mein dar Aaie
K Mein Bhi Khud Mein Paida Yeh , Ana Ka Jhol Kar Dekhon

Mere Bhi Sar Pay rakha Hai, Junoo Asbaab Ki Soorat
Mile Fursat Tou Is Gathrri Ko Mein Bhi Khol Kar Dekhon

Na Woh Awargi Mujh Mein, Na Woh Shuftagi Mujh Mein
Mein Kis Mayaar Pay Apni , Wafa Ko Tol Kar Dekhon,,,.....



Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Tere Waday Agar Wafa Hotay....

Romantic Urdu Poetry

تیرے وعدے اگر وفا ہوتے
ہم مجازی  صحیح ,. خدا ہوتے۔

Tere Waday Agar !  Wafa Hotay
      Hum Mijaazi Sahi , Khuda Hotay,,,,,


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Tuesday, 14 May 2013

Mujhe Aisa Lutf Ataa Kiya, Jo Hijr Tha Na Visaal Tha,..


 
Mere Mosamon K

مجھے ایسا لطف عطا کیا، جو ہجر تھا نہ وصال تھا
مرے موسموں کے مزاج داں، تجھے میرا کتنا خیال تھا

کسی اور چہرے کو دیکھ کر، تری شکل ذہن میں آگئی
تیرا نام لے کے ملا اسے، میرے حافظے کا یہ حال تھا

کبھی موسموں کے سراب میں، کبھی بام و در کے عذاب میں
وہاں عمر ہم نے گزار دی، جہاں سانس لینا مُحال تھا

کبھی تُو نے غور نہیں کیا، کہ یہ لوگ کیسے اُجڑ گئے؟
کوئی میر جیسا گرفتہ دل، تیرے سامنے کی مثال تھا

تیرے بعد کوئی نہیں ملا، جو یہ حال دیکھ کے پوچھتا
مجھے کس کی آگ جُھلسا گئی؟ میرے دل کو کس کا مَلال تھا؟

کہیں خون دل سے لکھا تو تھا، تیرے سال ہجر کا سانحہ
وہ ادھوری ڈائری کھو گئی، وہ نجانے کون سا سال تھا؟




Mujhe Aisa Lutf Ataa Kia, Jo Na Hijr Tha Na Visaal Tha
Mere Mosamo K Mijaaz Daan, Tujhe Mera Kitna Khayal Tha

Kisi Aur Chehre Ko Dekh Kar, Teri Shakl Zehan Mein Aagaie
Tera Naam Lay K Mila Usay, Mere Haafzay Ka Yeh Haal Tha

Kabhi Mosamon K Saraab Mein, Kabhi Baam-o-Dar K Azaab Mein
Wahan Umr Hum Ne Guzaar Di , Jahan Saans Lena Muhaal Tha

Kabhi Tu Ne Gour Nahi Kia, K Yeh Log Kese Ujarr Gaey ?
Koi Mere Jesa Girafta Dil, Tere Samne Ki Misaal Tha

Tere Baad Koi Nahi Mila, Jo yeh Haal Dekh K Poochta
Mujhe Kis Ki Aag Jhulsa Gaie? Mere Dil Ko Kis Ka Malaal Tha

Kaheen Khoon-e-Dil Se Likha Tou Tha, Tere Saal-e-Hijr Ka Aaiena
Woh Adhoori Dairy Khoo Gaie, Woh Na Jane Konsa Saal Tha,,,......




Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It